بلدیہ عظمیٰ ریونیو ہدف میں ناکام‘ افسران ارب پتی بن گئے

October 12, 2015 5:11 pm0 commentsViews: 28

بدعنوانیوں اور ناقص حکمت عملی کے باعث بلدیہ عظمیٰ رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی کے ہدف کا 18 فیصد ہی حاصل کرسکی
محکمہ بدترین مالی بحران کا شکار‘ وزیر بلدیات سندھ نے بھی افسران کی کرپشن پر مکمل خاموشی اختیار کررکھی ہے
کراچی(رپورٹ۔فرید عالم)کے ایم سی کے افسران ادارے کنگال کر کے ارب پتی بن گئے ،بلدیہ عظمیٰ کراچی کو سال کے شروع میں ہی اربوں روپے کا جحٹکا،بلدیہ عظمیٰ کراچی مالی سال 2015-16کی پہلی سہ ماہی میںمقررہ ریونیو ہدف حاصل کرنے میں مکمل طور پر ناکام ،افسران کی ناقص حکمت عملی اور بد عنوانیوںکے باعث بلدیہ عظمیٰ کراچی مقررہ ریونیو حدف میں سے بامشکل 20فیصد ریونیوحاصل کر سکی،مالی سال 2015-16کی پہلی سہ ماہی میں کے ایم سی کی اپنی آمدنی کا حدف1,740.359ملین روپے مقرر کیا گیا تھا ،کے ایم سی مقررہ حدف کا صرف 18فیصد حاصل کرسکی جبکہ (کے ڈی اے )کے لئے پہلی سہ ماہی کا مقررہ حدف820.068ملین روپے رکھا گیا ہے کے ڈی اے کے افسران بھی مقررہ ریونیو حدف کا صرف 35فیصد ریونیو جمع کرسکے،بلدیہ عظمیٰ کراچی کو پہلی ہی سہ ماہی میں افسران کی عدم دلچسپی اور کرپشن کے باعث ریونیو کی مد میں 75فیصد سے زائد کا خسارہ کے ایم سی اور کے ڈی اے کی آمدنی کے لیئے مقررہ ریونیو حدف 2560.427میں سے صرف25فیصد611.796ملین روپے حاصل کرسکے ۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی کے ریونیو حاصل کر نے والے اہم محکموں میں جس میں محکمہ لوکل ٹیکس ایڈورٹائزمنٹ،محکمہ چارجڈ پارکنگ، محکمہ ای اینڈ آئی پی، محکمہ ویٹرنری،محکمہ فوڈ،محکمہ لینڈ،محکمہ کلچر اینڈ ریکرایشن کے اعلیٰ عہدوں پر بھاری نذرانوں کے عوض تعینات کیئے گئے افسران کی لوٹ مار کے باعث بلدیہ عظمیٰ کراچی کو اربوں روپے کا خسارہ اُٹھانا پڑا جس کی وجہ سے بدترین مالی بحران کا شکارکے ایم سی مزید مشکلات میں مبتلا ہو گئی ہے تاہم اعلیٰ عہدوں پر تعینات افسران کی کرپشن پر وزیر بلدیات سندھ محکمہ بلدیات سندھ نے مکمل طور پر خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔

Tags: