متنازع تقریر عدالت نے الطاف حسین کو 81 سال قید کی سزا سنادی

October 13, 2015 1:59 pm0 commentsViews: 28

24 لاکھ روپے جرمانہ عائد‘ گلگت کی انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے تمام اثاثے ضبط کرنے کا حکم بھی دیا
ایم کیو ایم کے آئینی و قانونی ماہرین عدالتی فیصلے کا جائزہ لے رہے ہیں‘ سفارشات کی روشنی میں لائحہ عمل طے کرینگے‘ رابطہ کمیٹی
گلگت، کراچی( خبر ایجنسیاں) گلگت کی انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے پاک فوج اور ملک کے خلاف متنازعہ تقریر کرنے کے مقدمے میں متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین کو 2 بار عمر قید سمیت مجموعی طور پر 81 سال کی سزا سناتے ہوئے 24 لاکھ روپے جرمانہ عائد کر دیا اور ملزم کے اثاثے ضبط کرنے کا حکم دے دیا ہے ۔ عدات نے الطاف حسین کو غیر موجودگی میں سزا کو سنائی، عدالتی کارروائی میں الطاف حسین کے کسی وکیل نے حصہ نہیں لیا، ایئر پورٹ سمیت گلگت بھر میں درج9 مقدمات کی سماعت خصوصی عدالت کے جج صہبت خان نے کی۔ ذرائع کے مطابق قبل ازیں فاضل عدالت الطاف حسین کو اشتہاری قرار دے کر نا قابل ضمانت وارنٹ بھی جاری کر چکی تھی تاہم وارنٹ پر عملدر آمد نہیں ہو سکااور پیر کے روز مقدمہ کی کارروائی مکمل ہونے پر عدالت نے الطاف حسین کے خلاف فیصلہ سناتے ہوئے  غداری کے الزام میں81 برس قید اور24 لاکھ جرمانہ کی سزا سنا دی الطاف حسین کے تمام اثاثے ضبط کرنے کا حکم دیا۔ عدالت نے دفعہ504 کے تحت2 سال قید ایک لاکھ روپے جرمانہ اور دفعہ505 کے تحت 7 سال قید اور5 لاکھ روپے جرمانہ عائد کیا گیا ہے۔ انسداد دہشت گردی قانون  کی دفعہ11V کے تحت عمر قید اور تمام ملکی اور بیرون ملک جائیداد ضبط کرنے کا حکم دیا ہے۔ عدالت نے انسداد دہشت گردی کی عدالت کے قانون کے تحت10,10 سال قید اور3 لاکھ روپے جرمانہ کا حکم سنایا ہے۔ سیکورٹی اداروں کے خلاف متنازع تقاریر پر الطاف حسین کے خلاف گلگت بلتستان کی عدالتوں میں9 مقدمات درج کرائے گئے تھے۔ ان تمام مقدمات پر انسداد دہشت گردی کی عدالت نے 21 ستمبر کو فیصلہ محفوظ کیا تھا۔ متحدہ قومی موومنٹ کی رابطہ کمیٹی نے گلگت کی انسداد دہشت گردی کی عدالت کی جانب سے الطاف حسین کو 81 سال کی سزا سنائے جانے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم کے آئینی و قانونی ماہرین عدالتی فیصلے کے آئینی و قانونی پہلوئوں کا جائزہ لے رہے ہیں۔ قانونی ماہرین کی سفارش کی روشنی میں اس بارے میں لائحہ عمل طے کیا جائے گا۔

Tags: