محرم الحرام میں دشمن قوتوں کو امن و امان خراب کرنیکا موقع نہ دینے کا فیصلہ

October 14, 2015 2:35 pm0 commentsViews: 48

مدارس نہیں دہشت گردوں کے خلاف ہیں، کسی کو بھی شرانگیز تقریر کرنے یا قابل اعتراض مواد تقسیم کرنے کی اجازت نہیں، وزیراعلیٰ سندھ قائم علی شاہ
محرم الحرام کے تقدس کو برقرا رکھاجائے گا، مختلف مکاتب فکر کے علماء کے اجلاس میں عزم، وزیراعلیٰ کی شیعہ علما و طلباء کے ورثاء کو معاوضہ دینے پر آمادگی
کراچی( اسٹاف رپورٹر) وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے کہا ہے کہ ان کی حکومت مدارس نہیں بلکہ دہشت گردوں کے خلاف ہے جن کا مذہب سے کوئی تعلق نہیں کسی کو بھی شر انگیز تقاریر پر قابل اعتراض مواد تقسیم کرنے کی اجازت نہیں دیں گے، ہمارے قوانین اور ضابطے اسکولوں پر بھی لاگو ہوتے ہیں تمام مدارس کو رجسٹرڈ کرکے اسکروٹنی نیٹ میں لانا چاہتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کو مختلف مکاتب فکر کے علماء اور مذہبی اسکالر کے ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں عزم کا اعادہ کیا گیا کہ محرم الحرام کے تقدس کو ہر حال میں بر قرا رکھا جائے گا۔ اجلاس میں علماء کی تجویز پر وزیر اعلیٰ سندھ نے مختلف مدارس کے شہید ہونیوالے علماء اور طلبہ کے ورثا کو معاوضہ کی ادائیگی پر بھی آمادگی ظاہر کی۔ وزیر اعلیٰ نے علماء حضرات سے کہا کہ شہید ہونیوالے متعلقہ ثبوت اور ایف آئی آر کی کاپی متعلقہ ڈی آئی جی کو دیں جن کے والدین کو حکومت کی جانب سے معاوضہ نہیں دیا گیا ہے۔ اجلاس میں اس بات کا بھی احاطہ کیا گیا ہے کہ تمام مسلمان آپس میں بھائی ہیں لہٰذا محرم الحرام کے دوران کوئی بھی تیسری دشمن قوت موقع کا فائدہ حاصل کر کے امن و امان کو نقصان پہنچا سکتی ہے۔ لہٰذا اس صورتحال کو مد نظر رکھ کر آپس میں اتفاق و اتحاد سے کوئی بھی ایسا موقع نہیں دیا جائے گا جس سے امن و امان میں رخنہ پیدا ہو۔ وزیر اعلیٰ قائم علی شاہ نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے صوبہ سندھ میں امن و امان کے قیام کو یقینی بنایا ہے کراچی کو دوبارہ روشنیوں کا شہر بنادیں گے۔ اس لئے ہمیں تمام مکتبہ فکر کے تعاون کی ضرورت ہے۔ اس موقع پر علماء نے سندھ حکومت کو نہ صرف محرم الحرام بلکہ ہر وقت امن و امان کے قیام کے حوالے سے غیر مشروط تعاون کی یقین دہانی کرائی ۔

Tags: