سندھ ورکرز ویلفیئر بورڈ میں کروڑوں روپے کے گھپلوں کا انکشاف

October 14, 2015 2:53 pm0 commentsViews: 17

50 ہزار سے زائدمزدورں کے بچے کتابوں اور یونیفارم سے محروم حکومت کی جانب سے کروڑوں روپے کی فراہمی جاری
نیب سیکریٹری ورکرز بورڈ شہلا کاشف سمیت دیگر افسران کیخلاف تحقیقات کررہی ہے
کراچی( نیوز ڈیسک) سندھ ورکرز ویلفیئر بورڈ میں کروڑوں روپے کے گھپلے، سیکریٹری نے بد عنوان افسران و عملے کی سرپرستی شروع کر دی، اس سلسلے میں باوثوق ذرائع نے بتایا کہ سندھ ورکرز ویلفیئر بورڈ کے تحت کراچی سمیت اندرون سندھ میں قائم ورکرز ماڈل اسکولز میں صوبائی حکومت کی جانب سے ہر سال کروڑوں روپے کے فرنیچر، درسی کتب، کاپیوں اور مزدوروں کے بچوں کے یونیفارم کیلئے مختص کئے جاتے ہیں تاہم حیرت انگیز طور پر دو سال سے ورکرز ماڈل اسکولز میں زیر تعلیم پچاس ہزار بچوں کو نہ ہی کتابیں، کاپیاں دی جا رہی ہیں اور نہ ہی انہیں یونیفارم مہیا کیا جا رہا ہے۔ ذرائع کے مطابق اس ضمن میں نیب کی جانب سے سیکریٹری ورکرز ویلفیئر بورڈ شہلا کاشف سمیت دیگر افسران کے خلاف تحقیقات جاری ہیں۔ دوسری جانب ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ سیکریٹری ورکرز بورڈ شہلا کاشف نے مالی گھپلوں میں ملوث افسران کی سرپرستی بھی شروع کر رکھی ہے۔ واضح رہے کہ موجودہ چیئر مین سندھ ورکرز ویلفیئر بورڈ رشید سولنگی کو تعینات ہوئے ایک ماہ ہی ہوا ہے اس لئے وہ محکمہ میں ہونیوالی بے ضابطگیوں سے لا علم ہیں جس کے سبب سیکریٹری ورکرز بورڈ نے چیئر مین کو شیشے میں اتارنے کی کوششیں شروع کر دی ہیں۔