محرم میں امن قائم رکھنے کیلئے جدید ٹیکنالوجی کا استعمال کیا جائے، گورنر

October 14, 2015 2:57 pm0 commentsViews: 18

کمانڈ اینڈ کنٹرول سسٹم میں خرابی کی شکایت قابل قبول نہیں ہوگی، شہر کے دورے کے موقع پر بات چیت
کراچی (سٹی رپورٹر) محرم الحرام کے موقع پر امن و امان کو قائم رکھنے کے لئے کمانڈ اینڈ کنٹرول سسٹم میں جدید ٹیکنالوجی کا استعمال یقینی بنایا جائے گا سوک سینٹر اور سی پی او میں قائم کمانڈ اینڈ کنٹرول سسٹم کو سنکرونائز کیا جائے گا یہ بات گورنر سندھ ڈاکٹرعشرت العباد خان نے سوک سینٹر میں قائم کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر کے معائنے کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہی ان کے ہمراہ صوبائی وزیر داخلہ سندھ انور سیال، ایڈمنسٹریٹر بلدیہ عظمیٰ کراچی سجاد حسین عباسی، اے آئی جی سندھ مشتاق مہر، میٹروپولیٹن کمشنر سمیع الدین صدیقی، رینجرز کے افسران اور سینئر پولیس افسران موجود تھے، ایک سوال کے جواب میں گورنر سندھ نے کہا کہ کمانڈ اینڈ کنٹرول سسٹم کے متعلق شکایات ملتی ہیں جس کا جائزہ لیا گیا اور غیر فعال کیمروں کو 100 فیصد درست کرکے قابل استعمال بنایا جائے گا انہوں نے کہا کہ محرم الحرام کے سلسلے میں کسی بھی ایمرجنسی کی صورت میں فوری اقدام کے لئے کمانڈ اینڈ کنٹرول سسٹم کو اہمیت حاصل ہے، قبل ازیں گورنر سندھ کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ سوک سینٹر سے 1167 کیمروں کی مانیٹرنگ کی جاتی ہے مگر اس میں سے 1150 کیمرے فعال ہیں گورنر سندھ کو بتایا گیا کہ ’’کے الیکٹرک‘‘ کے سسٹم میں تعطل کے باعث کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے لہٰذا ’’کے الیکٹرک‘‘ کو پابند کیا جائے کہ بجلی کی فراہمی میں تعطل نہ ہو، پولیس ڈپارٹمنٹ پر مختلف اداروں کے واجبات کے حوالے سے سوال کا جواب دیتے ہوئے صوبائی وزیر داخلہ انور سیال نے کہا کہ واجبات کی ادائیگی قسط وار کردی جائے گی، محرم الحرام کے سلسلے میں سیکورٹی کو یقینی بنانے کے لئے وزیر داخلہ نے کہا کہ سندھ بھر میں 64 ہزار 4 سو 15 پولیس اہلکار تعینات کئے جائیں گے۔

محرم الحرام میں حساس شہروں کو فوج کے حوالے کرنے کافیصلہ
18 ہزار فوجی جوان کراچی، سکھر، گھوٹکی، شکار پور، لاڑکانہ، حیدرآباد اور دیگر صوبوں میں تعینات ہونگے
اسلام آباد، راولپنڈی، لاہور، گوجرانوالہ، جہلم، جھنگ، ٹوبہ ٹیک سنگ، شیخوپورہ، اوکاڑہ و دیگر شہر حساس ترین قرار
اسلام آباد( یو پی پی) وفاقی اور صوبائی حکومتوں نے محرم الحرام کے دوران حساس شہروں میں فوج تعیناتی کیلئے درخواست جی ایچ کیو بھجوا دی ہے۔ 15 سے 18ہزار فوجی جوان محرم میں امن و امان کیلئے سول انتظامیہ کی مدد کریں گے۔ اور ان کی تعیناتی کا سلسلہ یکم محرم کے بعد شروع ہوگا، ذرائع کے مطابق اسلام آباد سمیت کو چاروں صوبوں اور حساس شہروں میں محرم میںفوج کی تعیناتی سے متعلق درخواست جی ایچ کیو کو موصول ہوگئی ہے حساس ترین شہروں میں فوج سول انتظامیہ کی مدد کیلئے موجود رہے گی۔ ذرائع کے مطابق حساس ترین شہروں میں اسلام آباد، راولپنڈی، لاہور، گوجرانوالہ، جہلم، جھنگ، ٹوبہ ٹیک سنگھ، شیخو پورا، اوکاڑہ، ملتان، بہاولپور، رحیم یار خان، مظفر گڑھ، کراچی ، سکھر، گھوٹکی، دادو، شکار پور، لاڑکانہ، حیدر آباد، پشاور، مردان، ایبٹ آباد، ہنگو، چار سدہ، کوئٹہ ، ڈیرہ مراد جمالی، خضدار شامل ہیں۔ ہر کور ہیڈ کوارٹرز میں بھی محرم کے سیکورٹی انتظامات کے حوالے سے ایک مانیٹرنگ سیل بنے گا جبکہ سول انتظامیہ کے بلانے پر فوج کسی بھی شہر اور علاقے میں فوری طور پر پہنچ جائے گی۔

Tags: