کالا باغ ڈیم سمیت7 آبی منصوبے زیر غور ہیں، خواجہ آصف، پی پی اور اے این پی کا شدید ردعمل

October 14, 2015 3:05 pm0 commentsViews: 33

واپڈا نے موسم گرما کے دوران پانی ذخیرہ کرنے کا جامع منصوبہ تیار کیا ہے،2018 تک لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کر دینگے، وزیر پانی و بجلی
حکومت نیا تنازع پیدا کر رہی ہے، خورشید شاہ کوئی مائی کا لعل کالا باغ ڈیم نہیں بنا سکتا، زاہد خان کا موقف
اسلام آباد( مانیٹرنگ ڈیسک)وفاقی وزیر پانی و بجلی خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ کالا باغ ڈیم سمیت 7 بڑے آبی ذخائر کے منصوبوں کی تعمیر زیر غور ہے‘ سینیٹ کی قائمہ کمیٹی کے اجلاس میں بریفنگ کے دوران خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ بجلی کی کمی کو پورا کرنے کیلئے متعدد منصوبے زیر غور ہیں اور جن 7پروجیکٹوں کی منصوبہ بندی کی جارہی ہے ان میں کالا باغ ڈیم بھی شامل ہے جس سے پانی کی کمی اور لوڈشیڈنگ پر قابو پایا جاسکے گا۔ انہوں نے کہا کہ کالا باغ ڈیم کا تفصیلی ڈیزائن اور ٹینڈر دستاویزات 1988 ء سے مکمل ہیں‘ منصوبے پر عملدرآمد حکومت پاکستان کے فیصلے کے بعد ہی ہوگا جبکہ رواں خریف سیزن میں35.86 ملین ایکڑ فٹ پانی سمندر میں گر کر ضائع ہوا۔ دوسری جانب سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے پلاننگ کے چیئرمین سینیٹر کریم احمد خواجہ نے کہا کہ سندھ میں350 کلو میٹر اور بلوچستان میں750 کلو میٹر زمین سمندر برد ہوچکی ‘ یہ ایک بڑا سانحہ ہے‘2070 ء میں سندھ کے بڑے بڑے شہر پانی مین ڈوب جائیں گے۔ ان خیالات کااظہا انہوں نے کمیٹی کے اجلاس سے خطاب میں کیا۔ پارٹی نے خواجہ آصف کے بیان پر شدید رد عمل کااظہار کیا‘ خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ حکومت کالا باغ ڈیم کا معاملہ اٹھا کر نیا تنازع پیدا کررہی ہے جبکہ اے این پی کے رہنما زاہد خان نے کہا کہ کالا باغ ڈیم مردہ گھوڑا ہے جس میں جان ڈالنے کی کوشش کی جارہی ہے‘ کوئی مائی کا لعل کالا باغ ڈیم نہیں بناسکتا۔

Tags: