فائرنگ اور ایوان گولوں سے حملے لیاری دھماکوں سے گونج اٹھا

October 20, 2015 3:14 pm0 commentsViews: 23

سنگولین میں گینگ وار کے دو مسلح گروپوں میں دوبدو جھڑپیں، پولیس اور رینجرز نے علاقے کا گھیرائو کرلیا
عزیر بلوچ گروپ اور بابالاڈلہ گروپ لیاری میں پھر ایک دوسرے کے مقابل آگئے، ایوان گولے خالی پلاٹ میں گرنے سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا، عزیر گروپ کے کارندوں کے ٹھکانوں پر بھی حملہ کیا گیا
دھماکوں کی آواز کے بعد پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری نے سنگولین، جھٹ پٹ مارکیٹ اور فوٹو لین سمیت اطراف کے علاقوں کو گھیرے میں لے کر خارجی اور داخلی راستے بند کردیے، گھر گھر تلاشی کے دوران پانچ افراد گرفتار
کراچی( کرائم رپورٹر) لیاری میں گینگ وار گروپس ایک دوسرے کیخلاف پھر مورچہ بند ہوگئے‘ مسلح جھڑپوں کا سلسلہ جاری‘ فائرنگ کے علاقہ میں ایوان بموں سے بھی حملے کئے گئے‘ لیاری دھماکوں سے گونج اٹھا‘ صورتحال پر قابو پانے کیلئے پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری نے علاقے کو گھیرے میں لے کر آپریشن شروع کردیا‘ داخلی اور خارجی راستے بھی بند کردیئے گئے‘ تفصیلات کے مطابق لیاری کے علاقے سنگولین میں عذیر بلوچ گروپ اور بابا لاڈلہ گروپ کے درمیان گزشتہ شب مسلح جھڑپیں شروع ہوگئیں‘ دونوں گروپوں نے ایک دوسرے پر گولیاں برسائیں پھر ایوان بم حملے شروع کردیئے۔گزشتہشب بابا لاڈلہ گروپ کے کارندوں نے ریکسر لین سے کلاکوٹ کے علاقے فوٹو لین اورجھٹ پٹ مارکیٹ سے دو ایوان بم داغے گئے جس کے نتیجے میں وہاں کھڑی بس اوردو کاروں کو نقصان پہنچا تاہم کوئی جانی نقصان نہیںہوا،اس ہی دوران افشانی گلی اور توبہ گلی کے درمیان لیاری گینگ وار بابا لاڈلہ اور عزیر گروپ کے کارندوں میں مسلح تصادم شروع ہوگیا ،فائرنگ کی ترتراہٹ اور ایوان بم کے دھماکوں سے لیاری کے مختلف علاقوںمیں خوف وہراس اور رات کو کھلنے والی دکانیں اور ہوٹل بند ہوگئے ،اس اطلاع پر پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی ،علاقے سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق مذکورہ گروپ کارندے بھی زخمی ہوئے تاہم پولیس نے تصدیق نہیں کی ۔دونوں گروہوں میں مسلح تصادم زور پکڑ گیا ہے جبکہ علاقہ ایوان گولوں کے دھماکوں کی آوازوں سے گونج اٹھا ہے اور علاقہ مکین گھروں میں محصور ہوکر رہ گئے ہیں‘ پولیس نے بتایا کہ ایوان گولے خالی پلاٹ میں گرے ہیں جس کی وجہ سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا ہے‘ باخبر ذرائع کے مطابق لیاری گینگ وار اورعزیر بلوچ کے کارندوں نے کچھ دن قبل لیاری میں بابا لاڈلہ کے کمانڈر اسلم فوجی کو فائرنگ کرکے قتل کیا تھا جس کا بدلہ لینے کیلئے بابا لاڈلہ کے کارندوں نے عزیر بلوچ گروپ کے کارندوں کے ٹھکانے پر حملہ کیا لیکن واقعے کے وقت کوئی بھی موجود نہیں تھاجائے حادثے سے تھوڑا آگے لیاری گینگ وار کے سرغنہ عزیر بلوچ کا گھر بھی ہے‘ دھماکوں کی آواز سنتے ہی پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری نے سنگولین‘ جھٹ پٹ مارکیٹ اور فوٹو لین کو گھیرے میں لے کر داخلی و خارجی راستوں کو رکاوٹیں لگا کر بند کردیا اور کسی بھی شخص کو علاقے سے باہر یا اندر جانے کی اجازت نہیں تھی‘ مذکورہ آپریشن کے دوران گھر گھر تلاشی اور ملزمان کے ٹھکانوں کی تلاشی کے دوران 5 مشتبہ افراد کو حراست میں لے کر نامعلوم مقام پر منتقل کردیا‘ باخبر ذرائع نے بتایا کہ زیر حراست افراد کے قبضے سے کوئی اسلحہ نہیں ملا ہے اور ان زیر حراست افراد کا تعلق گینگ وار سے بتایا جاتا ہے‘ مذکورہ آپریشن میں رینجرز اور پولیس کی خواتین اہلکاروں نے بھی حصہ لیا جو کہ گھر گھر تلاشی کے دوران ساتھ موجود تھیں۔

Tags: