بینک فراڈ اور ڈکیتیوں کے 500 مقدمات کے ملزمان ضمانتوں پر رہا

October 20, 2015 4:05 pm0 commentsViews: 22

شہر کے پانچوں اضلاع کی عدالتوں میں چلنے والے 500 سے زائد مقدمات میں متاثرین کوئی انصاف حاصل نہیں کرسکے
سٹی گورنمنٹ کے اکائونٹس سے جعلسازی کے ذریعے 2 ارب روپے ذاتی اکائونٹس میں منتقل کرنے والے افسران کے مقدمات التواء کاشکار
کراچی( نیوز ڈیسک) سٹی کورٹ اور بینکنگ عدالتوں میں چلنے والے500 سے زائد بینک فراڈ اور بینک ڈکیتیوں کے مقدمات میں نامزد ملزمان تفتیشی افسران کی ناقص تفتیش کی وجہ سے ضمانتوں پر رہا ہوگئے‘ مقدمات میں عوام الناس کے اربوں روپے پھنس گئے‘ عدالتی ذرائع نے بتایا کہ پانچوں‘ ڈسٹرکٹ عدالتوں میں چلنے والے500 سے زائد مقدمات میں ملوث ملزمان ضمانتوں پر رہا ہوگئے اور ان مقدمات میں متاثرین انصاف حاصل نہیں کرسکے۔ جعلسازی اور فراڈ کرتے ہوئے سٹی گورنمنٹ کے اکائونٹس سے2 ارب روپے ذاتی اکائونٹس میں منتقل کرنے والے شہری حکومت کے افسران کے مقدمات بھی تاحال التواء کا شکار ہیں۔ تھانہ سولجر بازار کی حدود میں ایم سی بی بینک لاکرز ڈکیتی کیس میں ملوث تمام ملزمان تفتیشی افسران کی ناقص تفتیش کے باعث ضمانتوں پر رہا ہوگئے‘ سولجر بازار لاکرز ڈکیتی کیس میں ذرائع کے مطابق2 ارب روپے لوٹے گئے لیکن چند لاکھ روپے برآمدگی دکھائی گئی اور برآمد کی گئی رقم بھی ملزمان کے مطابق وہ ان کے خاندان کے افراد سے لوٹی گئی تھی‘ اس طرح بہادر آباد ‘گلشن اقبال بینک ڈکیتی کیس کے ملزمان بھی رہا ہوگئے‘ ملزمان کے ضمانتوں پر رہا ہونے کے بعد حقدار اپنی رقم وصول کرنے سے تاحال محروم ہیں۔ شہر دیگر بینک ڈکیتیوں کے مقدمات بھی التواء کا شکار ہیں۔ گواہان کے مکمل بیانات بھی ریکارڈ نہیں ہوسکے ہیں۔

Tags: