بلدیہ عظمیٰ کے 50افسران 3,3گاڑیوں پر زبردستی قابض

October 26, 2015 5:35 pm0 commentsViews: 27

تمام کا تعلق گریڈ17 سے 19 تک ہے، قانوناً ایک گاڑی رکھنے کے مجاز ہیں، 13 سے سے 1600سی سی گاڑیاں نہیں رکھ سکتے
ان گاڑیوں کے لیے پیٹرول، مرمت اور ڈرائیوروں پر کروڑوں کے اخراجات بھی کے ایم سی برداشت کرتی ہے، رپورٹ
کراچی( اسٹاف رپورٹر)بلدیہ عظمیٰ کراچی کے متعدد افسران نے دو اور تین تین گاڑیوں پر زبردستی قبضہ کررکھا ہے‘ باخبر ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ 50 کے قریب گریڈ 17‘ 18اور 19 گریڈ کے افسران کے پاس دو یا اس سے زائد گاڑیاں ہیں جبکہ وہ قانون کے تحت ایک گاڑی رکھ سکتے ہیں‘ ذرائع نے بتایا کہ گریڈ17 کے بعض افسران نے13 سو اور 16 سی سی تک کی سرکاری گاڑیاں رکھی ہوئی ہیں حالانکہ انہیں اس کا استحقاق نہیں ہے‘ ان گاڑیوں کیلئے ڈرائیور‘ پیٹرول اور مرمت کے تمام اخراجات کے ایم سی برداشت کرتی ہے اور ماہانہ کروڑوں روپے کا اس مد میں بل بنتا ہے‘ ذرائع نے بتایا کہ بعض طاقتور افسران نے زبردستی ایک سے زائد گاڑیوں پر قبضہ کررکھا ہے‘ محکمہ وہیکل جس کی ذمہ داری ہے وہ بھی ماضی میں صرف فہرستیں مرتب کرنے تک محدود رہا ہے‘ فہرست میں ہمیشہ باہر سے آنیوالے چند بیورو کریٹ کے نام ٹاپ پر شامل کردیئے جاتے ہیں تاکہ ایڈمنسٹریٹر اور میٹروپولیٹن کمشنر کسی کارروائی سے پہلے سوچ میں پڑ جائیں۔ اس طرح محکمہ وہیکل ہر بار اپنے کے ایم سی کے دوست افسران کو بچا لیتا ہے۔ واضح رہے کہ کے ایم سی کا محکمہ وہیکل صرف افسران کی گاڑیوں کی مد میں ماہانہ کروڑوں روپے کے اخراجات کرتا ہے۔

Tags: