موبائل فون کمپنیوں کی جانب سے 5 سموں کی اجازت کیوں دی گئی

November 5, 2015 4:56 pm0 commentsViews: 20

سپریم کورٹ نے پی ٹی اے سے 24 گھنٹوں میں جواب طلب کرلیا
کراچی میں ناخوشگوار واقعات میں موبائل فون سموں کو استعمال کیا گیا غیر قانونی سموں کا استعمال بند ہونا چاہئے‘ جسٹس امیر مسلم ہانی
اس بات کی وضاحت ہونی چاہئے کہ آخر پانچ سموں کا اجراء کس وجہ سے کیا جاتا ہے‘ کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس
اسلام آباد( یو پی پی) سپریم کورٹ میں موبائل فون کی جانب سے 5 سموں کی اجازت کے بارے میں پی ٹی اے کے حکام سے 24 گھنٹوں میں جواب طلب کیا گیا ہے۔ جبکہ عدالت نے بلوچستان بد امنی کیس بھی مذکورہ مقدمے کے ساتھ لگانے کا حکم دیا ۔چیف جسٹس انور ظہیر جمالی نے ریمارکس دیئے ہیں کہ عدالت کو بتایا جائے کہ پانچ سموں کے اجراء کی اجازت کیوں دی گئی جبکہ جسٹس امیر ہانی مسلم نے کہا ہے کہ کراچی میں ناخوشگوار واقعات میں موبائل فون سموں کو استعمال کیا گیا۔ اس ایشو کو سپریم کورٹ نے سب سے پہلے اٹھایا ۔ غیر قانونی سموں کا استعمال  اب بند ہونا چاہئے ۔ انہوں نے یہ ریمارکس گزشتہ روز دیئے ہیں چیف جسٹس انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے موبائل فون کمپنیوں کی جانب سے پانچ سموں کے اجراء کے بارے میں مقدمے کی سماعت کی اس دوران  عدالت کا کہنا تھا کہ اس بات کی وضاحت ہونی چاہئے کہ آخر پانچ سموںکا اجراء کس وجہ سے کیا جاتا ہے ۔

Tags: