تاجروں کا ود ہولڈنگ ٹیکس نہ دینے کا فیصلہ تبدیل نہیں کرایا جا سکا

November 5, 2015 5:47 pm0 commentsViews: 29

وزیر خزانہ قرضوں کی نئی قسط کیلئے تاجروں کو قربانی کا بکرا بنانا چاہتے ہیں
تاجروں کا اتحاد قابل ستائش ہے، عتیق میر اور آصف اللہ والا کی بات چیت
کراچی( کامرس رپورٹر) ایف بی آر ٹیکس نیٹ میں اضافے کیلئے نام نہاد تاجر رہنمائوں کی بیساکھی استعمال کرنے کے باوجود تاجروں کے ود ہولڈنگ ٹیکس نہ دینے کے فیصلے کو تبدیل نہیں کرا سکی، آل کراچی تاجر اتحاد کے چیئر مین عتیق میر نے نمائندہ آغا ز سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ موجودہ  صورتحال میں تاجروں نے ملک گیر پیمانے پر جس اتحاد کا ثبوت دیا ہے وہ باعث ستائش ہے۔ انہوں نے بتایا کہ یہ تاجر رہنما آل پاکستان انجمن تاجران کے اسلام آباد، لاہور، اور کوئٹہ میں ہونے والے  اجلاس میں نہ صرف شریک رہے بلکہ متفقہ فیصلوں کی تائید بھی کی اس کے باوجود کراچی کی ایف بی آر کمیٹیوں میں ان کی شرکت اور اجلاس سمجھ سے بالا تر ہیں  انہوں نے کہا کہ کراچی کے20 لاکھ سے زائد تاجر پہلے ہی ٹیکسوں کی مد میں70 فیصد ادائیگی کرتے ہیں جبکہ وزیر  خزانہ آئی ایم ایف سے قرضوں کی نئی قسط کے اجراء کیلئے تاجروں کو ہی قربانی کا بکرا بنا نا چاہتے ہیں اور اس مقصد کیلئے نام نہاد تاجروں کی بیساکھی استعمال کر رہے ہیں اس موقع پر آرام باغ الائنس آف مارکیٹس کے چیئر مین آصف اللہ والا نے کہا کہ ٹیکس ریفارم کے بغیر ہم اب کسی قسم کا ٹیکس ادا نہیں کریں گے۔ اور ایف بی آر کے جو نمائندے ان نام نہاد تاجروں کے ساتھ مارکیٹوں میں داخل ہونگے انہیں خفت اٹھانے کے سوا کچھ حاصل نہ ہوگا۔

Tags: