وزیر اعلیٰ سندھ کا پراپرٹی ٹیکس وصولی کی شرح پر عدم اطمینان سروے کی ہدایت

November 6, 2015 1:36 pm0 commentsViews: 24

صوبے میں آخری بار پراپرٹی سروے 2001 میں ہوا تھا‘ قانون کے مطابق ہر 5 سال بعد سروے کرانا ضروری ہے
ہائی ویز پر چیکنگ کیلئے جدید آلات خریدے جائیں‘ قائم علی شاہ کی وزیر اعلیٰ ہائوس میں اجلاس سے خطاب
کراچی( اسٹاف رپورٹر) وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے محکمہ ایکسائز و ٹیکسیشن کی جانب سے پراپرٹی ٹیکس کے ٹارگٹ اور اس کی وصولیابی پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے غیر تسلی بخش قرار دیا تاہم دیگر وصولیوں، کو مثبت قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ پراپرٹی ٹیکس کی وصولیاں بڑھانے کیلئے بھر پور ذرائع موجود ہیں اور اس سلسلے میں تخمینے سے وصولی تک پورے عمل کو کمپیوٹرائزڈ کر لیا جائے۔ انہوں نے محکمہ کے افسران کو ہدایت کی کہ وہ نئے سرے سے پراپرٹی سرو ے کر وائیں کیونکہ صوبے میں آخری سروے2001ء میں ہوا تھا جبکہ قانون کے مطابق محکمے کو ہر پانچ سال بعد پراپرٹی کا تازہ سروے کرانا ضروری ہوتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کو وزیر اعلیٰ ہائوس میں منعقد ایک اعلیٰ سطحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ وزیر اعلیٰ نے محکمہ ایکسائز و ٹیکسیشن کو ہدایت کی کہ ہائی ویز پر چیکنگ کیلئے جدید آلات خریدے جائیں۔ وزیر اعلیٰ نے چیف سیکورٹی سندھ کو محکمہ ایکسائز کے خلاف عدالتی مقدمات ذاتی طور پر مانیٹرنگ کرنے کی ہدایت کی۔ اس موقع پر وزیر ایکسائز و ٹیکسیشن گیان چند ایسرانی نے محکمہ کی کی کارکردگی کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ محکمہ ایکسائز نے رواں مالی سال میں جولائی سے ستمبر 2015ء کے پہلے کوارٹر کے دوران 41.5 بلین روپے کے ٹارگٹ کے مقابلے میں 27 فیصد ریکوری کے ساتھ11.2 بلین روپے کی وصولی کر لی ہے۔

Tags: