گائے چوری کے الزام میں ہندو جنونیوں نے مدرسے کے معلم کوقتل کردیا

November 6, 2015 2:03 pm0 commentsViews: 23

انتہاپسندوں نے منی پور میں 55 سالہ حشمت علی کو گھر سے اغواء کرنے کے بعد سرعام تشدد کا نشانہ بنایا
مسلم استاد کے قتل کے خلاف تھانے کے باہر احتجاج اور شٹر ڈائون ہڑتال ، پولیس کا مظاہرین پرتشدد،15افراد زخمی
نئی دہلی( نیوز ڈیسک) بھارتی ریاست منی پور میں انتہا پسند ہندوئوں کے ہجوم نے گائے کے چوری کے الزام میں ایک مسلمان کو سر عام قتل کردیا‘ واقعے کے بعد علاقے میں کودگی پائی جاتی ہے‘ تفصیلات کے مطاعق ریاست منی پور کے اچے کونلائی موریبا گائوں میں ہندئو جنونیوں نے گائے چوری کا الزام لگاتے ہوئے مقامی مدرسے کے 55 سالہ محمد حشمت علی عرف بابو کو زبردستی گھر سے اٹھالیا اور بعد میں انتہا پسندوں کے ہجوم نے انہیں سرعام مار مار کر بے دردی سے قتل کیا‘ محمد حشمت کے قتل کیخلاف مسلم تنظیموں نے منی پور میں شٹر ڈائون ہڑتال کی‘ متاثرہ خاندان نے قتل کی رپورٹ مقامی تھانے میں درج کرائی ہے‘ پولیس نے گائے کے مالک کو گرفتار کرلیا ہے‘ تھانہ انچارج شرت سنگھ نے بتایا کہ واقعہ پیر کو پیش آیا‘ جبکہ جمعرات کو مظاہرین ملزمان کی گرفتاری کیلئے تھانے کے سامنے احتجاج کررہے تھے اور انہیں وہاں سے منتشر کرنے کیلئے ربڑ کی گولیوں کا استعمال کیا جس میں15 افراد زخمی ہوگئے‘ مسلمان تنظیموںنے حشمت کے قتل کا موازانہ دادری واقعے سے کرتے ہوئے حکومت اور پولیس پر فوری طور پر کارروائی نہ کرنے کا الزام عائد کیا ہے۔

Tags: