مقابلے میں ہلاک ایک دہشت گرد خالد شیخ محمد کا بھانجا نکلا

November 11, 2015 5:59 pm0 commentsViews: 23

گلشن اقبال میں رینجرز اور حساس اداروں سے مقابلے میں2 دہشت گرد مارے گئے تھے
مقابلے میں ہلاک ادریس بلوچ القاعدہ کی ٹاپ لیڈر شپ میں شامل تھا، ذرائع کا دعویٰ
کراچی( نیوز ڈیسک) کراچی کے علاقے گلشن اقبال میں حساس اداروں اور رینجرز کے مقابلے میں ہلاک ہونیوالے دو دہشت گردوں میں سے ایک کے بارے میں سنسنی خیز انکشافات ہوئے ہیں‘ دہشت گردوں کی شناخت فہد اور صالح محمد کے نام سے ہوئی تھی تاہم صالح محمد درحقیقت ادریس بلوچ ہے جو نائن الیون کے ماسٹر مائنڈ خالد شیخ محمد کا بھانجا ہے اس کا ایک بھائی عبداللہ ابھی بھی گوانتا ناموبے میں قید ہے‘ ذرائع بتاتے ہیں کہ ادریس بلوچ القاعدہ کے دوسرے تیسرے درجے کا شخص تھا‘ تفصیلات کے مطابق گلشن اقبال بلاک13 ڈی ‘18 اگست کی شب فلیٹ میں حساس اداروں اور رینجرز نے چھاپہ مارا تو دہشت گردوں نے فائرنگ کردی‘ فائرنگ سے حساس ادارے کے جانباز اور نڈر اسسٹنٹ ڈائریکٹر سجاد کامران شہید ہوگئے جبکہ جوابی فائرنگ میں دو دہشت گرد مارے گئے تھے جن کی ابتداء میں شناخت صالح محمد اور فہد کے نام سے ہوئی تھی اور ان کی تدفین بھی کردی گئی تاہم حساس ادارے کو کچھ ایسی اطلاع ملی کہ صالح محمد کی دوبارہ قبر کشائی کراکر ڈی این اے ٹیسٹ کرائے گئے اور پھر سنسنی خیز انکشاف ہوئے‘ ذرائع بتاتے ہیں کہ مارا گیا دہشت گرد صالح محمد اصل میں ادریس بلوچ تھا‘ ادریس بلوچ القاعدہ کی ٹاپ لیڈر شپ میں سے تھا‘ جبکہ دوسرا سنسنی خیز انکشاف یہ ہوا ہے کہ ادریس بلوچ امریکہ میں نائن الیون حملوں کے ماسٹر مائنڈ خالد شیخ محمد کا بھانجا تھا‘ خالد شیخ محمد کو راولپنڈی سے پکڑا گیا تھا اور اطلاعات کے مطابق اب وہ گوانتاناموبے میں قید ہے ‘ادریس بلوچ کا ایک اور بھائی عبداللہ تاحال گوانتاناموبے میں قید ہے اور وہاں سے اس کی تصدیق ہوچکی ہے‘ ذرائع نے مزید کہا کہ ادریس بلوچ پاکستانی نہیں بلکہ ایرانی تھا جس نے جعلی شناختی کارڈ بنارکھاتھا۔

Tags: