اصلاحاتی پیکیج، پولیس مکمل تحقیقات کے بعد ایف آئی آر درج کرسکے گی

November 18, 2015 5:17 pm0 commentsViews: 30

ملک کے فوجداری نظام انصاف کو جدید بنانے اور طویل دیوانی مقدمہ بازی کنٹرول کرنے کے لیے مسودہ قانون تیار
اختلافات سے پاک معاملات میں نادرا کو وراثت کا سرٹیفکیٹ جاری کرنے کا اختیار دیاجائے گا
اسلام آباد( نیوز ڈیسک) وزیر اعظم کی قانونی ٹیم نے ملک کے فوجداری نظام کو جدید بنانے، طویل دیوانی مقدمہ بازی کو کنٹرول کرنے اور انتہائی حد تک استحصالی ایف آئی اے آر اسکیم کو بہتر بنانے کیلئے ایک قانونی اصلاحاتی پیکج تیار کرلیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ قانونی اصلاحاتی پیکج میں تبدیلی بھی شامل ہے۔ تا کہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ پولیس صرف مکمل تحقیقات کے بعد ہی فوجداری مقدمات درج سکے جس طرح ایف آئی اے ( فیڈرل انوسٹی گیشن ایجنسی ) میں ہوتا ہے۔ ایف آئی اے کا موجودہ نظام انتہائی استحصالی ہے جس میںمعصوم افرا دکو ہراساں کیا جاتا ہے حتیٰ کہ جعلی ایف آئی آر کی بنیاد پر پولیس انہیں جیل میں بھی ڈال دیتی ہے۔ کہا جاتا ہے کہ قانونی پیکج کے تحت ان معاملات میں تبدیلی لائی جائے گی جن کا تعلق کسی نہ کسی طرح سے عام آدمی کی زندگی سے جڑا ہے۔ ایک ذرائع کا کہنا ہے کہ سب سے مشکل کام وراثت کا سرٹیفکیٹ حاصل کرنا ہے اور یہ دستاویزات حاصل کرنے کیلئے لوگوں کو6 مہینوں سے لے کر ایک سال تک کا عذاب برداشت کرنا ہوتا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ اس طرح کے معاملات ہماری عدالتوں پر مجموعی بوجھ کا20 فیصد حصہ بنتے ہیں۔ اس مسئلہ سے نمٹنے کیلئے قانون کا مسودہ تیار کرلیا گیا ہے جس میںسفارش کی گئی ہے کہ ایسے معاملات جس میں کسی طرح کا اختلاف نہ ہو ان میں نادرا کو وراثت سرٹیفکیٹ جاری کرنے کا اختیار دیا جائے۔ اصلاحات میں اس طریقہ کار کو ختم کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔ جن میں مختلف اداروں بشمول لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی، کیپیٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی، وراثت سرٹیفکیٹس یا جائیداد رجسٹرز کی ضرور ت ہوتی ہے۔ مجوزہ قانون کے تحت غیر متنازع معاملات میں وراثت سرٹیفکیٹس براہ راست نادرا کے زریعے پراسیس میں لائے جائیں گے۔ ایک مجوزہ تبدیلی کے حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے کہ دیوانی مقدمات میں یہ دیکھا گیا ہے کہ عدالت کی جانب سے طلبی کے نوٹس کے اجراء اور ان کی موجودگی کے سلسلے میں غیر ضروری تاخیر ہوتی ہے جسے بہتر کرنے کی ضرورت ہے اس عمل کی نجکاری کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے جس کے نتیجے میں سرکاری اداروں کی جانب سے سستی اور کرپشن کا عنصر ختم ہوجائے گا۔

Tags: