جرائم کم ہوگئے شہر بھر میں نو گو ایریاز ختم کر دئیے، آئی جی سندھ

November 24, 2015 4:20 pm0 commentsViews: 22

بہترین حکمت عملی اور بروقت فیصلوں کے باعث امن و امان کی صورتحال بہتر ہوگئی ہے شہر میں یومیہ7سے8 افراد قتل ہو رہے تھے
ایک سال کے دوران300 خطرناک دہشت گردوں کا خاتمہ اور بم بنانے والی 10 فیکٹریوں کو تباہ کیا گیا، اجلاس کی صدارت
کراچی( اسٹاف رپورٹر) کراچی پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ شہر بھر کے نو گو ایریاز ختم کر دئیے گئے ہیں۔ بہترین حکمت عملی اور بروقت فیصلوں کی بدولت نہ صرف امن و امان کی صورتحال بہترہوئی بلکہ تمام نوعیت کے جرائم میں بھی نمایاںکمی واقع ہوئی، یہ بات آئی جی سندھ غلام حیدر جمالی نے سینٹرل پولیس آفس میں ایک اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔ صوبہ سندھ میں امن و امان کی مجموعی صورتحال کا جائزہ لیا۔ اجلاس میں پولیس کی کارکردگی کی موازنہ رپورٹ پر مشتمل تفصیلات کا احاطہ کیا گیا، اجلاس کو رپورٹ کے مطابق بتایا گیا کہ بہترین حکمت عملی اور بروقت فیصلوں کی بدولت نہ صرف امن و امان کی صورتحال بہتر ہوئی ہے بلکہ تمام نوعیت کے جرائم میں بھی نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔ اس سے قبل جرائم کی وارداتیں روز بروز بڑھتی جا رہی تھیں۔ اور صوبے میں جرائم پیشہ عناصر آزاد انہ وارداتوں میں مصروف تھے، رپورٹ کے مطابق صوبہ سندھ کے مختلف اضلاع میں اغواء برائے تاوان کی وارداتیں معمول بن گئی تھیں۔ جبکہ کراچی میں روزانہ 7 سے8 افراد قتل ہو رہے تھے۔ رپورٹ میں مزید بتایا گیا کہ امن و امان کی صورتحال میں بہترین کا آغاز سندھ پولیس کے موجودہ کمانڈر کے بروقت فیصلوں اور حالات کے تقاضوں کو سامنے رکھتے ہوئے کراچی آپریشن کو انتہائی ٹھوس، مربوط اور بلا امتیاز کرنے سے ہوا، اغواء برائے تاوان کے جرائم تقریباً ختم ہو گئے ہیں جبکہ کراچی میں روزانہ قتل کی وارداتیں بھی اوسطاً 2 افراد تک ہوگئی ہیں رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ دہشت گردوں کے تقریباً تمام بڑے گروپس کے خلاف کارروائیوں کی بدولت صرف ایک سال کے دورانیے میں 300 خطرناک دہشت گردوں کا خاتمہ ہوا۔ نو گو ایریاز اور جرائم پیشہ عناصر کی پناہ گاہوں کو ختم کرتے ہوئے بم بنانیوالی 10 فیکٹریوں کو تباہ کیا گیا، رپورٹ کے مطابق6 جولائی 2014ء سے اب تک 998 ڈاکو ہلاک 16583 گرفتار ہوئے۔ 287 دہشت گرد ہلاک اور87 گرفتار ہوئے۔ 7 ٹارگٹ کلر ہلاک اور41 گرفتار ہوئے، 96 اغواء کار ہلاک اور60 گرفتار ہوئے، 6 بھتہ خور ہلاک اور328 گرفتار ہوئے۔ آئی جی سندھ نے پولیس کی کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے مزید ہدایات دیں کہ پولیس ایکشن کے نتائج کو بر قرار رکھنے کیلئے ٹارگٹڈ آپریشن کے تسلسل کو جاری رکھا جائے۔

Tags: