بلدیاتی الیکشن پورا شہر حساس قرار سیکورٹی مسئلہ بن گئی، حکام پریشانی کا شکار

November 25, 2015 4:02 pm0 commentsViews: 26

کراچی میں جعلی ووٹنگ کو روکنا اورووٹرز کیلئے اپنی مرضی سے حق رائے دہی کو یقینی بنانا الیکشن کمیشن کیلئے ایک بڑا چیلنج بن گیا
لیاری، لانڈھی، بلدیہ ٹائون، ناظم آباد، لیاقت آباد، کورنگی، اورنگی ٹائون، برنس روڈ،آرام باغ، قصبہ کالونی، شاہ فیصل کالونی، بلوچ کالونی، سائٹ ، نارتھ کراچی اور گلبرگ کے علاقوں میں واقع پولنگ اسٹیشنوں کو انتہائی حساس قرار دے دیا گیا ہے
کراچی میں الیکشن کے موقع پرامن و امان برقرار رکھنے کے لیے رینجرز نے آپریشن تیز کردیا، شہر کے داخلی اور خارجی راستوں کی کڑی نگرانی کی جارہی ہے، حساس علاقوں سے دہشت گردوں اور جرائم پیشہ افراد کو گرفتار کیاجارہاہے
کراچی(کرائم ڈیسک) کراچی میں آئندہ ماہ ہونے والے بلدیاتی انتخاب سیکورٹی رسک بن گئے ہیں حساس اداروں کی جانب سے پورے شہر کو حساس قرار دیا جا رہا ہے، اور سیکورٹی مزید سخت کرنے کیلئے کہا ہے، جس کے بعد رینجرز نے شہر کے حساس علاقوں میں آپریشن بہتر کر دیا ہے، اور دہشت گردوں و جرائم پیشہ عناصر کو گرفتار کیا جا رہا ہے دوسری طرف بلدیاتی الیکشن کے موقع پر سیکورٹی ایک مسئلہ بن گئی ہے، جس نے اعلیٰ حکام کوپریشانی میں مبتلا کر دیا ہے، بتایا جاتا ہے کہ سیکورٹی انتظامات ہونے کے باوجود جعلی ووٹنگ کو روکنا اور تمام ووٹرز کیلئے مرضی کے مطابق حق رائے دہی استعمال کرنے کو یقینی بنانا الیکشن کمیشن اور انتظامیہ کیلئے چیلنج بن گیا ہے، الیکشن کمیشن کے اعلیٰ حکام نے انتظامات کا جائزہ لینے کیلئے ہفتے کو کراچی میں اعلیٰ سطح کا اجلاس طلب کر لیا ہے اس ضمن میں با خبر ذرائع کا کہنا ہے کہ کراچی میں جاری آپریشن کی وجہ سے امن وامان کی صورتحال بہتر ہوئی ہے تاہم پانچ دسمبر کو کراچی میں ہونے والے بلدیاتی انتخابات کے دوران امن وامان قائم رکھنے خصوصاً دھاندلی اور جعلی ووٹنگ روکنے اور ووٹرز کیلئے آزاد فضا یقینی بنانا انتظامیہ اور الیکشن کمیشن کیلئے چیلنج بنا ہوا ہے، ذرائع نے بتایا کہ سندھ پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے درمیان اس بات پر اتفاق پایا جاتا ہے کہ انتخابات کے حوالے سے پورا کراچی شہر حساس ہے جن میں سے لانڈھی، لیاری، بلدیہ ٹائون، ناظم آباد، لیاقت آباد، کورنگی، اورنگی ٹائون، برنس روڈ، آرام باغ ،قصبہ کالونی، شاہ فیصل کالونی، بلوچ کالونی، سائٹ نارتھ کراچی اور گلبرگ کے بیشتر پولنگ اسٹیشن انتہائی حساس ہیں، جہاں پولنگ والے دن مسلح تصادم اور خونریزی کے خدشات موجود ہیں ذرائع نے بتایا کہ کراچی کی چھ میونسپل کار پوریشنز اور ایک میٹرو پولیٹن کارپوریشن کی209 یونین کمیٹیوں اور کراچی کے دیہی علاقوں کی38 یونین کونسلز پر مشتمل ضلع کونسل کیلئے قائم ہونے والی تقریبا ًچار ہزار144 پولنگ اسٹیشنز میں سے80 فیصد سے زائد انتہائی حساس ہیں شہری علاقوں کے برعکس کراچی کے دیہی علاقوں پر مشتمل ضلع کونسل میں حساس اور انتہائی حساس پولنگ اسٹیشنز کی تعداد کم ہے، ذرائع نے بتایا ہے کہ کراچی میں انتخابات کو شفاف بنانے کیلئے ضابطہ اخلاق پر عملدرآمد یقینی بنانا انتہائی اہم ہے، پولنگ اسٹیشنز کے اندر بھی رینجرز کے اہلکاروں کو تعینات کرنے کی ضرورت ہے، تاہم اس سلسلے میں حتمی فیصلہ الیکشن کمیشن کے فیصلوں کی روشنی میں کیا جائے گا، ساتھ ہی کوئیک رسپانس کیلئے پاک فوج کے جوانوں کی خدمات بھی حاصل کی جائیں گی، شہر کے داخلی و خارجی راستوں کی نگرانی بھی سخت کی جاری ہے، حکومت سندھ نے اسلحہ لائسنس معطل کرنے کا جو نوٹیفکیشن جاری کیا تھا اس کی مدت31 نومبر کو ختم ہو گی جس کے بعد اس میں مزید توسیع کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کیا جائیگا، حکومت سندھ نے اسلحہ کی نمائش پر عائد کردہ پابندی کی مدت بھی گزشتہ روز مزید90 روز کیلئے بڑھا دی ہے ، نوٹیفکیشن کے مطابق نجی سیکورٹی ایجنسیوں اور گارڈز کے یونیفارمز کسی بھی قانون نافذ کرنے والے اداروں سے مشابہ نہیں ہونے چاہئے، گاڑیوں کے کالے شیشوں،نجی گاڑیوں میں پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کی طرح لائٹنگ لگانے یا ایسا رنگ کرنے پر بھی پابندی میں توسیع کی گئی ہے، قانون نافذ کرنے والے اداروں کے سادہ لباس میں ڈیوٹی کرنے پر بھی پابندی ہوگی۔

Tags: