نارتھ کراچی یوپی موڑ پر دکانوں میں آتشزدگی ۔ آگ لگنے کے دیگر واقعات

November 25, 2015 4:23 pm0 commentsViews: 16

کمپیوٹر کی دکانوں میں اچانک آگ بھڑک اٹھی، لاکھوں روپے مالیت کا سامان خاکستر ہوگیا
کراچی( کرائم رپورٹر) رات گئے نارتھ کراچی یو پی موڑ پر دکانوں میں آتشزدگی، لاکھوں روپے کا سامان جل کر خاکستر، تفصیلات کے مطابق رات گئے نارتھ کراچی کے علاقے یو پی موڑ میں واقع کمپیوٹر کی دکان میں آگ لگ گئی اور دیکھتے ہی دیکھتے آگ پوری دکانوں میں پھیل گئی، اور آگ کے شعلے بلند ہونا شروع ہوگئے جس کی اطلاع فائر بریگیڈ حکام کو دی گئی۔ فائر بریگیڈ کے عملے نے موقع پر پہنچ کر آگ بجھانے کا عمل شروع کیا اور آدھے گھنٹے کی جدوجہد کے بعد آگ پر قابو پالیا۔ فائر بریگیڈ حکام نے بتایا کہ آگ بجھانے کے عمل میں3 گاڑیوں نے حصہ لیا۔ اور آدھے گھنٹے کی جدوجہد کے بعد آگ پر قابو پالیا، فائر بریگیڈ حکام نے بتایا کہ آگ لگنے کی وجہ معلوم نہیں ہو سکی۔ پولیس نے بتایا کہ آگ لگنے کے باعث دکانوں میں موجود لاکھوں روپے کا سامان جل کر خاکستر ہوگیا۔ جبکہ آگ شارٹ سرکٹ کے باعث لگی ہے تاہم پولیس کی مزید تفتیش جاری ہے۔

قبضہ گروپ نے پولیس اہلکاروں سے ملکر6 گھروں کو آگ لگا دی
خواتین جھلس گئیں، ملزمان دھمکیاں دیتے ہوئے فرار ، علاقہ مکین سراپا احتجاج
انصاف نہ ملا تو خود سوزی کرینگے، نیاز علی و دیگر کی احتجاجی مظاہرے کے موقع پر صحافیوں سے بات چیت
کراچی( اسٹاف رپورٹر) قبضہ گروپ نے پولیس اہلکاروں سے مل کر پاکستان ہومز کے 6 گھروں کو آ گ لگا دی۔ خواتین جھلس گئیں۔ مکانوں پر قبضہ اور نذر آتش کرنے کے خلاف احتجاجی مظاہرہ سے متاثرین نے انصاف نہ ملنے پر خود سوزی کی دھمکی دے دی ، تفصیلات کے مطابق تھانہ ملیر کینٹ کی حدود میں واقع اسکیم نمبر33 میں قائم گوٹھ پاکستان ہومز میں رہائش پذیر درجنوں مرد اور خواتین بچوں نے قبضہ گروپ اور پولیس کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ گزشتہ روز قبضہ گروپ سے تعلق رکھنے والے عجب گل اور ممتاز نے کراچی پولیس سے تعلق رکھنے والے دو پولیس افسران کے بھائیوں اسحاق لاشاری، اسماعیل لاشاری سمیت دیگر ساتھیوں سمیت مسلح ہو کر گوٹھ کے رہائشی نیاز علی کے گھر میں خواتین اور بچوں کو تشدد کا نشانہ بنایا ان کی چیخ و پکار سن کر علاقے کے لوگ وہاں آئے تو ملزمان نے فائرنگ کرکے وہاں موجود لوگوں کو ڈرایا دھمکایا اور آس پاس کے مکانوں پر بھی قبضہ کرنے کی کوشش کی ناکامی پر نیاز علی کے مکان سمیت دیگر 6 گھروں کو آگ لگا دی۔ جس کے نتیجے میں کئی عورتیں جھلس گئیں جبکہ ملزمان دھمکیاں دیتے ہوئے فرار ہوگئے مظاہرین کا کہنا تھا کہ اس سے قبل ملزمان عجب گل اور دیگر نے نیاز علی کے گھر میں گھس کر گھر سے طلائی زیورات اور نقد رقم لوٹ لی تھی جس پر مذکورہ ملزمان کے خلاف تھانہ ملیر کینٹ میں مقدمہ درج کرایا گیا ہے تاہم پولیس ملزمان کو گرفتار کرنے کے بجائے تحفظ فراہم کر رہی ہے اس موقع پر مظاہرین نے وزیر اعلیٰ سندھ، گورنر سندھ، آئی جی سندھ، ڈی جی رینجرز اور چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ سے ملزمان کے خلاف کارروائی کی اپیل کی ہے۔

 

Tags: