انٹرنیٹ پر دہشتگردی پھیلانے والوں کو 14برس قید بھگتنا ہوگی، سائبر کرائم بل منظور

December 12, 2015 4:19 pm0 commentsViews: 17

قومی اسمبلی میں 37کے مقابلے میں 51ووٹ سے منظوری دیدی گئی، سینیٹ سے منظوری کے بعد قانون نافذ العمل ہوگا، اسمبلی میں پی ٹی آئی کی مخالفت
ضرب عضب کے بعد دہشت گردوں نے انٹرنیٹ کے ذریعے زہریلے مواد کو پھیلانے کی کوشش کی ہیں اس قانون سے اس کی روک تھام ہوگی
اسلام آباد( آن لائن) قومی اسمبلی نے سائبر کرائم بل کثرت رائے سے منظور کرلیا، انٹر نیٹ پر حکومت اور عوام میں خوف و ہرس پھیلانے ، مذہبی تفرقہ بازی اور دھمکیوں پر14 سال قید اور زیادہ 5 کروڑ روپے ہرجانے کی سزا دی جا سکے گی اپوزیشن کی جانب سے بل کی مخالفت کے بعد رائے شماری کے حق میں51 حکومتی ارکان جبکہ مخالفت میں37 ارکان نے ووٹ دیا، پاکستان تحریک انصاف کے رکن اور آئی ٹی کمیٹی کے ممبر امجد علی خان نے سائبر کرائم میںسفارشات شامل نہ کرنے پر شدید احتجاج کیا جس پر اسپیکر قومی اسمبلی نے معاملے کی تحقیقات کرنے کی یقین دہانی کرائی، سائبر کرائم بل کو منظوری کے بعد سینیٹ میں بھیج دیا گیا ہے۔ جمعہ کے روز قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے انفارمیشن ٹیکنا لوجی کے چیئر مین کیپٹن ( ر) محمد صفدر نے ایوان میں سائبر کرائم بل پیش کیا جس پر پاکستان تحریک انصاف کے رکن اور انفارمیشن کمیٹی کے ممبرا امجد علی خان نے احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ کمیٹی کے اجلاس میں سفارشات چیئر مین کو دی تھی مگر وہ سفارشات بل میں شامل نہیں کی گئی جس پر کمیٹی کے چیئر مین نے کہا کہ مجھے آپ کی سفارشات نہیں ملی ہیں اور جن ممبران نے بل کے معاملے میں تعاون کیا ہے ان کی سفارشات شامل کی گئی ہیں انہوں نے بتایا کہ سائبر کرائم بل سے ملک میں انٹر نیٹ کے ذریعے دہشت گردی اور خوف و ہراس پھیلانے سمیت ہر طرح کے جرائم پر سزا دی جا سکے گی۔ انہوں نے بتایا کہ آپریشن ضرب عضب کے بعد دہشت گردوں نے انٹر نیٹ کے ذریعے اپنے زہریلے مواد کو پھیلانے کی کوششیں کی ہیں اور اس بل کے ذریعے سے ان کی روک تھام ممکن ہوجائے گی۔