آج سے،پی آئی اے فلائٹ آپریشن بند ہونے کا خدشہ

December 14, 2015 12:04 pm0 commentsViews: 37

پی آئی ا ے کوکمپنی آرڈیننس کے تحت چلائے جانے اور ممکنہ نجکاری کیخلاف اتوار کے روز ملازمین کی ہڑتال اور احتجاج، آج بھی ملک گیر احتجاج ہوگا
پیپلزیونٹی نے فلائٹ آپریشن بند کرنے کے لیے ملک گیر رابطے شروع کردیے، احتجاج کو مزید وسعت دینے کا فیصلہ اور ہڑتال کے دورانیے میں چار گھنٹے کا اضافہ کردیا گیا، مسافروں کو پریشانی کا سامنا
پی آئی اے کے افسران نے بھی فلائٹ آپریشن بند کرنے پر رضامندی ظاہر کردی، صدر،وزیراعظم اور وفاقی وزراء کی پروازوں کا بھی بائیکاٹ کیاجائے، ادارے کو کسی صورت نجی تحویل میں نہیں جانے دینگے، ملازمین کا عزم
انتظامیہ کی جانب سے پی آئی اے کی نجکاری کے خلاف تحریک چلانے والے ملازمین اور افسران کی گرفتاری کا فیصلہ، پیپلزیونٹی ایئرلیگ، آفیسر ایسوسی ایشن اور تحریک انصاف فرنٹ کے مرکزی رہنمائوں کی گرفتاری کے لیے حکمت عملی تیار
کراچی( نیوزڈیسک) پی آئی اے جو پہلے ہی مالی خسارے کا شکار ہے، اب ایک بار پھر شدید بحران میں مبتلا ہوگیا ہے آج سے ملک بھر میں پی آئی اے کا فلائٹ آپریشن بندہونے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے انتظامیہ نے فلائٹ آپریشن جاری رکھنے کیلئے حکمت عملی تیار کر لی نجکاری کے خلاف تحریک چلانے والے ملازمین اور افسران کو گرفتار کیا جائے گا۔ پی آئی اے ملازمین کے ذرائع کے مطابق پی آئی اے کو کمپنی آرڈیننس کے تحت چلائے جانے اور ممکنہ نجکاری کے خلاف پی آئی اے ملازمین نے فلائٹ آپریشن آج سے ممکنہ طور پر بند کرنے کیلئے لائحہ عمل طے کرلیا ہے۔ اتوار کو ملازمین کا احتجاج اور ہڑتال جاری رہی جس سے پی آئی اے کی4 پروازیں 2 سے5 گھنٹے تاخیر سے اپنی منزل مقصود کیلئے روانہ ہوئیں جبکہ نجی ایئر لائنز کی دبئی، ابو ظہبی اور جدہ جانے والی پروازیں بھی تاخیر کا شکار ہوئیں۔ ایئر لیگ کے صوبائی صدر راحت اقبال، پیپلز یونٹی کے میاں شاد محمد کے مطابق فلائٹ آپریشن بند کرنے کیلئے ملک بھر میں رابطوں کا سلسلہ مکمل کر لیا گیا ہے۔ صدر، وزیر اعظم ، وفاق وزراء کی پروازوں کا بھی بائیکاٹ کیا جائے گا۔ علاوہ ازیں افسران نے بھی فلائٹ آپریشن بند کرنے پر رضا مندی ظاہر کی ہے اور کہا ہے کہ نہ صرف ملک بھرمیں بیک وقت فلائٹ آپریشن بند کر دیا جائے گا بلکہ ہڑتال کے دورانئے میں4 گھنٹے کا اضافہ کر دیا گیا ہے اور احتجاج کو مزید وسعت دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ دوسری جانب پی آئی اے انتظامیہ نے مجوزہ نجکاری کے خلاف تحریک چلانے والے ملازمین اور افسران کی ممکنہ طور پر گرفتاری کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق پشاور سمیت ملک بھر میں ایئر لیگ، پیپلز یونٹی، آفیسرز ایسوسی ایشن، تحریک انصاف فرنٹ کے مرکزی اور صوبائی عہدیداروں کو گرفتار کرنے کیلئے حکمت عملی طے کی گئی ہے اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے صوبائی عہدیداروں کی فہرستیں تیار کرنا شروع کر دی ہیں۔ کراچی سے ذرائع کے مطابق پی آئی اے ملازمین کی مشترکہ ایکشن کمیٹی نے وفاقی وزیر خزانہ سے مذاکرات میں ناکامی کے بعد آج پیر سے بھر پور احتجاج کا فیصلہ کرلیا۔ اتوار کو مشترکہ ایکشن کمیٹی کے رہنمائوں سے ملاقات کے بعد پائلٹس ایسوسی ایشن( پالپا) نے ایکشن کمیٹی کے ساتھ بھر پور احتجاج میں شرکت کا فیصلہ کیا ہے۔ مشترکہ ایکشن کمیٹی کے رہنمائوں نے بتایا کہ ہفتے کو وفاقی وزیر خزانہ نے پی آئی اے ملازمین کی ایکشن کمیٹی کے رہنمائوں کو مذاکرات کیلئے اسلام آباد بلایا تھا تاہم3 گھنٹے طویل مذاکرات کے بعد مطالبات تسلیم نہیں کئے گئے۔