نئے سال سے گیس کے نرخوں میں 50فیصد اضافے کا امکان

December 14, 2015 12:57 pm0 commentsViews: 33

اوگریو ایف جی کے نرخ میں ڈھائی فیصد اضافہ کرکے 25ارب روپے کے خسارے کا بوجھ صارفین پر پہلے ہی ڈال چکا ہے
گیس کمپنیوں کو گزشتہ تین سالوں میں ساڑھے37ارب روپے کا خسارہ ہوا ہے جو صارفین سے وصول کیا جائے گا
اسلام آباد (یو پی پی) حکومت کی طرف سے یکم جنوری2016 ء سے گیس کے نرخوں میں تقریباً50 فیصد اضافے کا امکان ہے‘ اس سے قبل آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی( اوگرا) بھی سوئی سدرن اور سوئی ناردرن کی نا اہلیوں کے نتیجے میں مالی سال 2014-15 میں متعین کردہ ساڑھے 12 ارب روپے کی گیس چوری کی سزا بل ادا کرنے والے صارفین کو دے چکا ہے۔ مذکورہ بالا مالی سال سے اوگرا نے ایک بار پھر گیس کمپنیوں کو امن و امان کی صورتحال کے نتیجے میں ہونیوالا خسارہ پورا کرنے کیلئے بل ادا کرنے والے صارفین سے ایک فیصد جبکہ گیس استعمال نہ کرنے والے صارفین( نان گیس کنزیومرز) سے ڈیڑھ فیصد ٹیکس وصول کرنے کی اجازت دے دی تھی۔ اس کا مطلب مالی سال2014-15 ء میں صارفین سے وصول کردہ بے حساب گیس( یو ایف جی) چارجز ڈیڑھ کر7 فیصد تک جا پہنچنے ہیں۔ اس کی عکاسی یکم جنوری2016 ء کے بعد آنیوالے بلوں میں ہوگی جس میں اب صرف 17 دن باقی رہ گئے ہیں۔ قبل ازیں اوگرا پہلے ہی یو ایف جی کے نرخ میں ڈھائی فیصد اضافہ کرکے ساڑھے4فیصد سے7 فیصد تک اضافہ کرکے گیس کمپنیوں کی نا اہلیوں کا 25ارب روپے کے خسارہ کا بوجھ صارفین پر لادنے کا فیصلہ کرچکا ہے۔ مالی سال (2012-13‘2013-14‘2014-15) کے خسارے کا حساب کتاب کیا جائے تو یہ ساڑھے37ارب روپے بنتا ہے جو صارفین پر منتقل کیا جائیگا۔