بلدیہ کراچی کے ریونیو میں خطرناک حد تک کمی کا خطرہ

December 17, 2015 5:30 pm0 commentsViews: 28

سندھ حکومت نے بلدیہ کراچی کے محکمہ لوکل ٹیکسز ،محکمہ صحت اور محکمہ تعلیم کو ڈی ایم سیز کے حوالے کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کردیا
ایک ارب سے زائد کا ریونیو ٹیکس دینے والا محکمہ لوکل ٹیکسز ڈی ایم سیز کو منتقل ہونے سے بلدیہ کی آمدنی صفر رہ جائے گی
کراچی (سٹی رپورٹر) بلدیہ عظمیٰ کراچی کے ریونیو کو ایک اور بڑا جھٹکا، سندھ لوکل گورنمنٹ ایکٹ 2013 پر دو سال بعد عملدرآمد کیلئے حکومت سندھ نے بلدیہ کراچی کے محکمہ لوکل ٹیکسز (ایڈورٹائزمنٹ) محکمہ صحت اور محکمہ تعلیم کو ڈی ایم سیز کے حوالے کرنے کیلئے نوٹیفکیشن جاری کردیا، ایک ارب روپے سے زائد کا ریونیو دینے والا محکمہ لوکل ٹیکسز ڈی ایم سیز کو منتقل ہونے سے بلدیہ کراچی کے ریونیو میں خطرناک حد تک کمی کا خطرہ، محکمہ ماسٹر پلان اور محکمہ لوکل ٹیکسز بلدیہ کراچی کے ریونیو کیلئے آئیڈیل محکمے تھے، تفصیلات کے مطابق سندھ حکومت نے سندھ لوکل گورنمنٹ ایکٹ 2013ء پر عملدرآمد کیلئے 2 سال بعد محکمہ لوکل ٹیکسز (ایڈورٹائزمنٹ) محکمہ صحت اور محکمہ تعلیم کو ڈی ایم سیز کو منتقل کرنے کے حوالے سے نوٹیفکیشن جاری کردیا ہے، سندھ حکومت کے مذکورہ احکامات سے بلدیہ عظمیٰ کراچی کو ریونیو کی مد میں ایک اور بڑا جھٹکا لگا ہے، بلدیہ کراچی کے ذرائع کا کہنا ہے کہ محکمہ لوکل ٹیکسز (ایڈورٹائزمنٹ) میں جاری بدترین کرپشن اور بد عنوانیوں کے باوجود محکمہ ایک ارب روپے سے زائد کا ریونیو بلدیہ کراچی کو دیتا ہے، مذکورہ اہم ترین محکمہ بھی ڈی ایم سیز کو منتقل کئے جانے سے بلدیہ کراچی جو کہ پہلے ہی سنگین مالی بحران سے دوچار ہے مزید برآں اس میں مبتلا ہوجائے گا۔