عمران فاروق کو قتل کرنے کیلئے برطانوی شہرت کا لالچ دیا گیا

January 14, 2016 3:24 pm0 commentsViews: 17

منصوبے کے تحت 6ماہ تک دو ریسٹورنٹس میں ویٹر کی نوکری کی
عمران فاروق کے گھر کے قریب ایک کمرہ کرائے پر لیا تھا
زیرحراست ملزم محسن علی سید کا تفتیش کے دوران انکشاف
اسلام آباد(نیوز ایجنسیاں)ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر عمران فاروق کو قتل کرنے والے ملزموں سے سنسنی خیز انکشافات کا سلسلہ جاری ہے، ملزم محسن علی سید نے اپنے اقبالی بیان میں اعتراف کرتے کیا ہے کہ قتل کے لیے اسے برطانیہ کی شہریت اور رہائش کا لالچ دیا گیا تھا۔ منصوبے کے لیے چھ ماہ تک لندن میں دو مشہور ریسٹورنٹس پر بطور ویٹر نوکری بھی کی۔ میڈیا اطلاعات کے مطابق ڈاکٹر عمران فاروق قتل کیس میں گرفتار ہونے والے مرکزی ملزم محسن علی سید نے اقبالی بیان میں انکشاف کرتے ہوئے بتایا کہ ڈاکٹر عمران فاروق کو قتل کرنے کے لیے فروری2010 میں برطانیہ پہنچا۔ لندن میں ڈاکٹر عمران فاروق کی رہائش گاہ سے پچیس سے تیس گز کے فاصلے پر ایک کمرہ کرایے پر لیا جہاں سے عمران فاروق کے گھر آنے جانے کے شیڈول سے متعلق تمام معلومات اکٹھی کیں۔ خالد شمیم نے مستقبل کے سہانے خواب دکھائے تھے۔ تفتیشی ذرائع کا کہنا ہے کہ ملزموں کے اقبالی بیان میں سنسنی خیز انکشافات کیس کے ٹرائل میں بہت معاون ثابت ہوں گے۔ ملزم محسن علی نے اقبالی بیان میں کہا کہ عمران فاروق کو کو کاشف نے چھریوں اور اینٹوں کے وار کرکے قتل کیا، قتل کے بعد ہم سری لنکا پہنچ گئے۔ پیسے ختم ہونے پر خالد شمیم نے آکر مزید رقم فراہم کی۔ سری لنکا سے کچھ عرصے بعد کراچی پہنچے بعد میں 5 سال افغانستان میں قیام کیا۔ غیرقانونی طور پر پاکستان میں داخل ہورہا تھا کہ بارڈر پر پکڑا گیا۔