سانحہ صفورا کے ملزمان کے خاکوں کے بعد تصاویر منظر عام پر آگئیں

January 19, 2016 6:00 pm0 commentsViews: 34

تصاویر مرکزی ملزم عبداللہ منصوری اور ملزم محمد حسین عرف مستری پٹھان کی ہیں،ذرائع
کراچی( کرائم رپورٹر) سانحہ صفورا کے مرکزی ملزم عبداللہ منصوری اور ملزم محمد حسین عرف مستری پٹھان کے خاکوں کے بعد تصاویر منظر عام پر آگئی ہیں‘ تفصیلات کے مطابق ملزم عبداللہ منصوری نے سانحہ صفورا کے دوران بس کو روک رک اس میں بیٹھے مسافروں کو کلاشنکوف سے فائرنگ کرکے قتل کیا تھا‘ باخبر ذرائع نے بتایا کہ عبداللہ منصوری کو قانون نافذ کرنیوالے اداروں نے سرجانی کے علاقے سے شدید زخمی حالت میں گرفتار کیا تھا اور ملزم اورنگی ٹائون میں رینجرز پر دستی بم حملوں میں بھی ملوث بتایا جاتا ہے‘ باخبر ذرائع کے مطابق ملزم نے سال2015 ء میں فقیر کالونی میں رینجرز پر دستی بم حملے میں ملوث بتایا جاتا ہے اور ملزم عبداللہ منصوری حملے کے بعد جائے وقوعہ سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا تھا‘ باخبر ذرائع نے مزید بتایا کہ مارے جانیوالے دہشت گرد او ر خودکش حملہ آور دہشت گردوں کو عبداللہ منصوری نے بتایا تھا اور عبداللہ منصوری نے سرکاری تنصیبات اور عوامی اجتماعات پر دہشت گردی کی منصوبہ بندی کررکھی تھی جو کہ قانون نافذ کرنیوالوں نے بروقت کارروائی کرتے ہوئے ناکام بنادی دوسری جانب باخبر ذرائع نے بتایا کہ ملزم محمد حسین عرف مستری پٹھان بھی سانحہ صفورا میںملوث ہے جو کہ پولیس اور قانون نافذ کرنیوالے اداروں کو انتہائی مطلوب ہے‘ باخبر ذرائع کا کہنا ہے کہ محمد حسین عرف مستری پٹھان نے میرے پہلے بس ڈرائیور کو فائرنگ کرکے قتل کیا تھا اور ملزم محمد حسین عرف مستری پٹھان کا تعلق داعش سے بتایا گیا ہے‘ ذرائع کا کہنا ہے کہ ملزم لشکر جھنگوی کا عہدیدار بھی رہ چکا ہے اور ملزم شہر میں بینک ڈکیتی اور حیدر آباد میں سیکورٹی فورسز پر حملے میں ملوث ہے‘ حکومت سندھ کی جانب سے ملزم محمد حسین عرف مستری پٹھان کی گرفتاری کیلئے25 لاکھ روپے کا انعام مقرر ہے۔