ٹریفک حادثے میں مرنیوالے کیلئے ڈھائی لاکھ روپے معاوضہ مقرر

January 28, 2016 12:45 pm0 commentsViews: 23

کہنی سے اوپر بازو ضائع ہونے پر65 ہزار روپے، کہنی سے نیچے بازو ضائع ہونے پر50 ہزار روپے دیئے جائیں گے
ٹانگ ضائع ہونے پر65 ہزار نچلے حصے کے ضائع ہونے پر60 ہزار دیے جائیں، موٹر و ہیکلز بل2015 اسمبلی میں پیش
کراچی( اسٹاف رپورٹر) سندھ اسمبلی میں بدھ کو پراونشل موٹر وہیکلز ( ترمیمی ) بل 2015ء پر طویل بحث ہوئی ۔ اس بل میں ٹریفک حادثات میں جاں بحق ہونے والوں کے ورثاء اور زخمیوں کے لیے معاوضوں میں اضافہ تجویز کیا گیا ہے ۔ ان معاوضوں کو پنجاب کے برابر کر دیا جائے گا۔ سندھ میں معاوضوں کے شیڈول پر 1965 سے نظرثانی نہیں کی گئی تھی ۔ ترمیمی بل کے تحت اب معاوضے کے فنڈز کا استعمال سندھ بس اونرز کو آپریٹو سوسائٹی نہیں کرے گی بلکہ یہ معاوضے اچھی ساکھ کی حامل انشورنس کمپنی کے ذریعہ ادا کیے جائیں گے۔ بسوں کے مالکان انشورنس کمپنیوں کو پریمیم ادا کریں گے۔ سینئر وزیر تعلیم اور پارلیمانی امور نثار احمد کھوڑو نے بتایا کہ سوسائٹی کی طرف سے فنڈز کا غلط استعمال رک جائے گا۔ بل کے تحت نئے معاوضوں کی شرح حسب ذیل ہے ۔ ہلاک ہونے والوں کے لیے ڈھائی لاکھ روپے فی کس ، کہنی سے اوپر بازو ضائع ہونے پر65 ہزار روپے ، کہنی سے نیچے بازو ضائع ہونے پر50 ہزار روپے ، گھٹنے سے اوپر ٹانگ ضائع ہونے پر65 ہزار روپے ، گھٹنے سے نیچے ٹانگ ضائع ہونے پر60 ہزار روپے ، دونوں ٹانگیں ضائع ہونے پر ایک لاکھ 40 ہزار روپے ، سماعت کی مستقل محرومی پر 65 ہزار روپے ، ایک آنکھ ضائع ہونے پر 75 ہزار روپے ، دونوں آنکھیں ضائع ہونے پر ایک 40 ہزار روپے ، انگوٹھا ضائع ہونے پر 40 ہزار روپے ، ایک پاؤں کی تمام انگلیاں ضائع ہونے پر 50 ہزار روپے ، بڑی انگلی ضائع ہونے پر 40 ہزار روپے ، کوئی دوسری انگلی ضائع ہونے پر 38 ہزار روپے ، چہرے یا سر کی شکل بگڑ جانے پر 50 ہزار روپے ، ہڈی ٹوٹ جانے پر 40 ہزار روپے ، ایک دانت ٹوٹنے پر 12 ہزار 500 روپے ، دو یا زیادہ دانت ٹوٹنے پر 25 ہزار روپے معاوضہ تجویز کیا گیا ہے ۔ بل پر شق وار بحث کے دوران اپوزیشن کی پیش کردہ ترامیم پر بھی بحث ہوئی اور اتفاق رائے سے اس بل کی منظوری کو جمعہ تک موخر کر دیا گیا ۔