کچی آبادیوں کو مستقل کرنیکا بل سندھ اسمبلی میں پیش ہوگا

January 29, 2016 5:16 pm0 commentsViews: 20

سندھ میں 1409 ،کراچی میں 564 کچی آبادیاں ہیں، 1997ء تک کی کچی آبادیوں کو ریگولرارئز کردیا جائیگا، صوبائی وزیر
حکومت کچی آبادیوں کے مسائل پر آباد کے ساتھ مل کر کام کرے گی، طارق مسعود آرائیں کا آباد کے ظہرانے سے خطاب
کراچی( اسٹاف رپورٹر) صوبائی وزیر کچی آباد طارق مسعود آرائیں نے کہا ہے کہ کچی آبادیوں کے مسائل ایسوسی ایشن آف بلڈرز اینڈ ڈیولپرز کے ساتھ مل کر حل کریں گے۔ کچی آبادیوں کو مستقل کرنے کا بل سندھ اسمبلی کے آئندہ اجلاس میں پیش کیا جائے ۔ یہ بات انہوں نے آباد ہائوس میں ایک آباد کی جانب سے دئیے گئے ظہرانے سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ عام شہریوں کو مکان دینا پیپلز پارٹی کا منشور کا حصہ ہے، کچی آبادیوں کے رول ماڈل شہر بنانے اور ان کے رہائشیوں کو عالمی معیار کی رہائشی سہولیات فراہم کرنے کیلئے آباد کی تجاویز پر عمل کرنے کا اعلان کرتے ہوئے آباد کو ابتدائی طور پر ایک کچی آباد کی نشاندہی کی جائے گی جسے ایک رول ماڈل شہر بنایا جائے گا۔ طارق مسعود نے بتایا کہ سندھ میں1409جبکہ کراچی میں564کچی آبادیاں ہیں 1997ء تک کی کچی آبادیوں کو ریگولائز کرنے کا بل منظور کرنے کیلئے آئندہ ہفتے سندھ اسمبلی میں بل پیش کیا جائے گا۔ اس موقع پر آباد کے چیئر مین محمد حنیف گوہر نے کہا کہ پاکستان کی تعمیر و ترقی میں آباد کے ممبرز کے انتہائی اہم کردار ادا کیا ہے کچی آبادیوں کی پھیلائو پر قابو پانے کیلئے وفاقی و صوبائی حکومتوں کو نیشنل ہائوسنگ پالیسی کی سفارشات پر عمل کرنا ہوگا۔