سیکورٹی خدشات نجی سیکورٹی گارڈز کی مانگ میں بے پناہ اضافہ

January 29, 2016 5:36 pm0 commentsViews: 42

سیکورٹی ایجنسیوں کے مالکان دونوں ہاتھوں سے دولت سمیٹنے لگے
گارڈز کو چند ہزار دے کر نجی اداروں کے مالکان سے بھاری رقوم لی جاتی ہیں
کراچی (نیوز ڈیسک) سیکورٹی خدشات کے باعث نجی سیکورٹی گارڈز کی مانگ میں بے پناہ اضافہ ہو گیا، ان گارڈز کی مانگ بڑھنے کے بعد سیکورٹی ایجنسیوں کے مالکان دونوں ہاتھوں سے دولت سمیٹنے لگے، سیکورٹی گارڈز کو چند ہزار روپے دیکر اسکولوں اور نجی اداروں کے مالکان سے زیادہ پیسے بٹورے جا رہے ہیں، دہشت گردی بڑھنے کے بعد ہر ادارہ اپنے ملازمین کی سیکورٹی کیلئے گارڈز رکھنے پر مجبور ہے، نجی کمپنیاں فی گارڈز سے ماہانہ6 سے7 ہزار تک کماتی ہیں، اگر اوسط ایک سیکورٹی کمپنی100 گارڈز بھی مہیا کرے تو اس کے مالکان کو بیٹھے بٹھائے تقریبا7 لاکھ روپے ماہانہ مل جاتے ہیں لیکن اگر گارڈ کوئی واردات کر دے تو یہ کمپنیاں نقصان کا مداوا بھی نہیں کرتیں، دوسری طرف جو گارڈ بھرتی کیے جاتے ہیں ان کو کسی قسم کی تربیت نہیں دی جاتی ان کو جدید اسلحہ دیا جاتا ہے وہ ناکارہ ہوتا ہے اکثر دیکھا گیا ہے کہ اگر کسی جگہ کوئی واردات ہوگئی ہے تو یہ گارڈ اسلحہ نہیں چلاتے اگر چلانا بھی چاہیں تو اسلحہ اس قابل نہیں ہوتا کہ اس کوچلایا جائے سکے ان گارڈز کو ناکارہ اسلحہ دیا جاتا ہے شہرمیں نجی اداروں کے دفاتر کے باہر جو گارڈز کھڑے ہوتے ہیں ان میں سے اکثر کے پاس جو رائفلیں ہوتی ہیں ان کا ٹریگر نہیں ہوتا یا ان کے پاس گولیاں اور کارتوس نہیں ہوتے، اس بارے میں سیکورٹی کمپنیوں کے مالکان کا کہنا ہے کہ ان کے پاس جو گارڈز آتے ہیں ان کی پوری تسلی کی جاتی ہے اور ان کو جدید اسلحہ بھی دیا جاتا ہے