مردم شماری میں کسی بھی قومیت کو غیرسندھی شمار نہ کیاجائے، آل پارٹیز کانفرنس

January 30, 2016 4:19 pm0 commentsViews: 44

مردم شماری کے عمل میں 10دن کی توسیع کی جائے، دور دراز کے علاقوں میں بسنے والوں کو بھی اس کا حصہ بنایاجائے، قرارداد منظور
عوامی جمہوری پارٹی کے تحت پریس کلب میں تقریب، عبدالحکیم بلوچ، تاج حیدر، قیصر بنگالی و دیگر کی شرکت
کراچی (اسٹاف رپورٹر)مردم شماری کے عمل میں10 دن تک کی توسیع کی جائے تاکہ دور دراز علاقوں میں بسنے والے افراد بھی اس کا حصہ بن سکیں۔سندھ میں مختلف زبانیں بولنے والے سرائیکی ،،بروہی،کچھی،بلوچی اور اردو سب سندھی ہیں ان کو غیر سندھی شمار نہ کیا جائے۔مردم شماری کے عمل میں خواتین کو بھی شامل کیا جائے اور عملے سے صاف و شفاف عمل کا حلف لیا جائے ۔یہ مطالبہ عوامی جمہوری پارٹی کے تحت جمعہ کو کراچی پریس کلب میں منعقدہ آل پارٹی کانفرنس میں کیا گیا ۔اس موقع پر وفاقی وزیر مواصلات عبدالحکیم بلوچ،پیپلز پارٹی کے سینیٹر تاج حید ر،مسلم لیگ ( ن ) کے رکن سندھ اسمبلی حاجی شفیع محمد جاموٹ،سندھ یونائیٹڈ پارٹی کے سربراہ سید جلال محمود شاہ ،تحریک انصاف کے نادر اکمل لغاری ،جئے سندھ قومی محاذ کے ڈاکٹر نیاز کلانی ،ماہر معاشیات ڈاکٹر قیصر بنگالی اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔آل پارٹی کانفرنس میں منظور کی گئی قرار داد میں خدشہ ظاہر کیا ہے کہ مردم شماری کے عمل میں سندھ کے اصل باشندوں کو اقلیت میں ظاہر کیا جائے گا،اس عمل کو صاف شفاف بنانے کے لئے اس عمل میں 10 د ن تک توسیع کی جائے،سندھ میں باہر سے آنے والے افراد پر زمین خریدنے پر پابندی عائد کی جائے،ْقرارداد میں مطالبہ کیا گیا کہ سندھ میں مختلف زبانیں بولنے والے آباد ہیں جن میں سرائیکی ،بلوچی ،بروہی ،اردو اور کچھی سمیت دیگر شامل ہیں جن کو غیر سندھی ظاہر نہ کیا جائے،۔سینیٹر تاج حیدر نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ سندھ کے ساتھ زیادتیاں ہو رہی ہیں لیکن ہم کسی کو یہ حق نہیں دیں گے کہ وہ ہمارے حقوق پر ڈاکہ ڈالے۔