اسکولوں کی سیکورٹی کیلئے 300پولیس کمانڈو ز تعینات ہونگے

February 2, 2016 3:01 pm0 commentsViews: 43

پنجاب کی طرح سندھ میں دہشت گردی کا خطرہ نہیں ہے ، کراچی میں سیف اسکول پروجیکٹ بنائے جائیں، وزیراعلیٰ سندھ
نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد مزید تیز کرنے کی ہدایت کردی گئی، سندھ کابینہ کے اجلاس کے بعد مشیر اطلاعات کی بریفنگ
کراچی (اسٹاف رپورٹر) وزیر اعلیٰ سندھ کے مشیر اطلاعات مولا بخش چانڈیو نے کہا ہے کہ کراچی آپریشن جاری رہے گا اور رینجرز کے اختیات کا معاملہ خوش اسلوبی کے ساتھ طے ہوجائے گا ہماری وفاق سے کوئی لڑائی نہیں اور نہ ہی ہم بغاوت کررہے ہیں۔انہوں نے یہ بات پیر کو سندھ کابینہ کے اجلاس کے بعد میڈیا کو یہاں بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔ انہوں نے بتایا کہ کابینہ کا طویل ترین اجلاس وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کی زیر صدارت چیف منسٹر ہائوس میں ہوا جس میں امن و مان کی صورتحال، اسکولوں اور دوسرے تعلیمی اداروں کو فول پروف سیکورٹی فراہم کرنے اور دوسرے اہم امور پر غور کیا گیا اور بعض اہم فیصلے کئے گئے۔ مولا بخش چانڈیو نے کہا کہ اسکولوں کی سیکورٹی کے لئے پولیس کے تین سو کمانڈوز متعین کئے جائیں گے اور اس حوالے سے دوسرے حفاظتی اقدامات بھی کئے جارہے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں مشیر اطلاعات نے کہا کہ وفاقی وزیر داخلہ کا وزیر اعلیٰ سندھ کو فون کرنا اچھا شگون ہے ۔دریں اثنا معلوم ہوا ہے کہ سندھ کابینہ کے اجلاس میں پیر کو رینجرز کے خصوصی اختیارات کے معاملے پر بھی بڑی سنجیدگی سے غور کیا گیا اور کابینہ نے اختیارات میں مزید تین ماہ کی توسیع کی تجویز سے اتفاق کیا اور سفارش کی کہ اس حوالے سے سندھ اسمبلی کی منظور کردہ قرارداد کو پیش نظر رکھا جائے۔ زرائع کا کہنا ہے کہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے تعلیمی اداروں کی سکیورٹی کو فول پروف بنانے کی ہدایت کی ان کا کہنا تھا کہ اسکولوں کی حفاظت کے لئے سیف اسکول پراجیکٹ بنائے جائیں اس حوالے سے محکمہ داخلہ ، اسپیشل برانچ مل کر سمری بھیجیں۔ انہوں نے نیشنل ایکشن پلان پر عمل درا ٓمد مزید تیز کرنے کی ہدایت کی وزیر اعلیٰ سندھ نے کہا کہ اسکولوں کی سیکیورٹی پرخصوصی توجہ دینی ہوگی،پنجاب کی طرح سندھ میں دہشت گردی کاخطرہ نہیں،ہم اس مسئلے کوچھوڑنہیں سکتے ۔