موبائل فون صارفین پر بھاری ٹیکسز معاشی نمو کیلئے خطرہ قرار

February 8, 2016 1:06 pm0 commentsViews: 19

آلات اور استعمال کے ساتھ خدمات پر 65.5فیصد ٹیکس عائد کیا گیا ہے
پاکستان میں براڈبینڈ اور موبائل صارفین کا حصہ پستی کا شکار ہے،اسٹیٹ بینک
اسلام آباد( آئی این پی) اسٹیٹ بینک کی رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ پاکستان میں موبائل کے شعبے میں آلات اور استعمال کے ساتھ خدمات پر65.5 فیصد ٹیکس عائد کیا گیا ہے۔ موبائل ہینڈ سیٹس پر250 روپے کسٹم ڈیوٹی سمیت آواز کی وصولی اور ڈیٹا کی ترسیل کے آلات پر10 فیصد ڈیوٹی بھی شامل ہے، دنیا بھر میں ٹیلی کام سیکٹر میں سماجی ترقی اور معاشی نمو کیلئے اتنے بڑے پیمانے پر ٹیکس کہیں بھی نہیں ہیں۔ اسٹیٹ بینک نے صارفین پر بھاری ٹیکس کو معاشی نمو کیلئے خطرہ قرار دیدیا۔ تفصیلات کے مطابق مرکزی بینک کی جانب سے جاری کر دہ مالی سال2015-16 کی پہلی سہ ماہی کی جاری رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پاکستان موبائل فون صارفین کی تعداد کے لحاظ سے دنیا کے10 سر فہرست ملک میں شامل ہے، مگر براڈ بینڈ اور موبائل فون صارفین کا حصہ پستی کا شکار ہے۔